Tribe Republic
Tribe Republic is a Digital Tree having shoots of numerous digital initiatives

Real Success – اصل کامیابی – Motivational (Urdu – Hindi)

579

اصل کامیابی یہ ہے کہ آخرت کو سامنے رکھ کر دنیاوی زندگی گزاری جائے۔ فوٹو: فائل

’’ قسم ہے اُن گھوڑوں کی جو ہانپ ہانپ کر دوڑتے ہیں۔ پھر جو (اپنی ٹاپوں سے) چنگاریاں اُڑاتے ہیں۔ پھر صبح کے وقت یلغار کرتے ہیں۔ پھر اُس موقع پر غبار اُڑاتے ہیں۔ پھر اُسی وقت کسی جمگھٹے کے بیچوں بیچ جا گھستے ہیں۔ کہ انسان اپنے پروردگار کا بڑا ناشکرا ہے۔ اور وہ خود اس بات کا گواہ ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ وہ مال کی محبّت میں بہت پکّا ہے یعنی وہ دولت کا رسیا ہے۔ بھلا کیا وہ وقت اُسے معلوم نہیں ہے جب قبروں میں جو کچھ ہے، اُسے باہر بکھیر دیا جائے گا۔ اور سینوں میں جو کچھ ہے، اُسے ظاہر کردیا جائے گا۔ یقینا اُن کا پروردگار اُس دن اُن (کی جو حالت ہوگی اُس) سے پوری طرح باخبر ہے۔‘‘ (سورۃ العادیات کا مفہوم)
خلاصۂ: ﷲ تعالیٰ نے اس سورۃ میں انسان کو بتایا ہے کہ وہ اس دنیا میں ﷲ تعالیٰ کی بے شمار مخلوقات سے فائدہ اٹھاتا ہے اور عمومی طور حیوانات، نباتات اور جمادات سب ﷲ تعالیٰ کے حکم سے انسان ہی کے تصرّف میں ہیں۔ کیوں کہ ﷲ تعالیٰ نے انسان ہی کو زمین میں اپنا خلیفہ متعین فرمایا ہے، جیسا کہﷲ تعالیٰ نے سورۃ البقرہ میں ذکر فرمایا ہے۔ اس موقع پر خصوصاً جنگی گھوڑوں کی انسانوں کی حفاظت کے لیے قربانیوں کا تذکرہ کیا گیا ہے کہ وہ انسان کی اطاعت و خدمت کے لیے اپنی جان کی بازی لگا کر ہر وقت اپنے دنیاوی مالک کی حفاظت کے لیے تیار رہتا ہے۔

ﷲ تعالیٰ نے انسان کے بخیل ہونے پر اُس کی ملامت کی ہے کہ ﷲ تعالیٰ ہی نے انسان کو دولت، منصب اور اولاد دی ہے اور یہ ساری کائنات بھی ﷲ تعالیٰ کے حکم سے وجود میں آئی ہے، لیکن مال حاصل کرنے کے بعد انسان مال کے متعلق ﷲ تعالیٰ اور لوگوں کے حقوق کماحقہ ادا نہیں کرتا بل کہ گن کر چھپا کر رکھتا ہے اور لوگوں پر ظلم بھی کرتا ہے۔ حالاں کہ ایک دن ایسا ضرور آئے گا کہ مال و دولت اور ساری جائیداد یہیں رہ جائے گی اور خالی ہاتھ دنیا کو چھوڑ کر جانا پڑے گا۔
قدرت کا کیسا عجیب نظام ہے کہ ہر سو سال کے بعد دنیا کے ظاہری مالک زمین بوس ہو جاتے ہیں۔ حالاں کہ دوسروں کو بھی ایک دن خالی ہاتھ اس دنیا سے چلے جانا ہے۔ چند دن وارثین مرنے والے اپنے قریبی رشتے داروں کو یاد رکھتے ہیں، پھر وہ بھی اپنی دنیاوی زندگی میں ایسے مست ہوجاتے ہیں کہ کبھی کبھار صرف اُن کا تذکرہ کیا کرتے ہیں۔ حالاں کہ انہیں بھی اچھی طرح معلوم ہے کہ کسی بھی لمحے موت کا فرشتہ اُن کی بھی روح قبض کرنے کے لیے آسکتا ہے اور انہیں بھی اس دنیا سے اپنے باپ دادا کی طرح خالی ہاتھ جانا ہے۔
ﷲ تعالیٰ نے بیان کیا کہ انسان کی کام یابی یہ نہیں ہے کہ ساری صلاحیتیں صرف اس دنیاوی زندگی کو سنوارنے میں لگادے، بل کہ اصل کام یابی و کام رانی یہ ہے کہ انسان آخرت کی زندگی کو سامنے رکھ کر دنیاوی فانی اور وقتی زندگی گزارے اور خود کو اس دنیا میں مسافر سمجھے۔ اس بات کا کامل یقین رکھ کر دنیاوی زندگی کے قیمتی اوقات گزارے کہ ایک دن ایسا ضرور آئے گا کہ دنیا کے وجود سے لے کر قیامت تک آنے والے تمام انسانوں کو حشر کے میدان میں جمع کیا جائے گا اور ہر شخص کا نامۂ اعمال پیش کیا جائے گا۔ عقل مند شخص وہ ہے جو مرنے سے قبل مرنے کے بعد والی ہمیشہ کی زندگی کے لیے تیاری کرے۔ اصل بات یہ ہے جس پر شہادت کے لیے گھوڑوں کے چند اوصاف کی قسمیں کھائی گئی ہیں۔ یعنی چند قسمیں کھاکر خالق کائنات نے فرمایا: انسان اپنے پروردگار کا بڑا ناشکرا ہے۔ اس آیت میں ﷲ تعالیٰ نے حضرت انسان کو کنود کہا ہے، جس کے معنی ناشکرے کے ہیں۔

حضرت حسن بصریؒ نے فرمایا: ’’ وہ شخص جو مصائب کو یاد رکھے اور نعمتوں کو بُھول جائے اُس کو کنود کہا جاتا ہے۔‘‘ غرض یہ کہ جو انسان اپنے گھوڑوں کی یہ ساری جاں نثاری دیکھتا ہے اور ان کی قربانیوں سے فائدہ اٹھاتا ہے لیکن اسے یہ سوچنے کی توفیق نہیں ہوتی کہ وہ بھی اپنے رب کا غلام ہے، اس کو بھی کسی نے پیدا کیا ہے، کیوں کہ وہ اور پوری کائنات خود بہ خود کیسے قائم ہوسکتی ہے؟ لہٰذا اس کی یہ ذمے داری ہے کہ وہ بھی انہی گھوڑوں کی طرح اپنے حقیقی مولا و آقا کی اطاعت کے لیے ہر وقت تیار رہے۔

ﷲ تعالیٰ ارشاد فرماتا ہے کہ انسان کے ناشکرے ہونے پر کسی دلیل کی ضرورت نہیں ہے، اس کا طرز عمل خود گواہی دیتا ہے کہ وہ ناشکرا ہے۔ انسان کے ناشکرے ہونے کے لیے اس کے کردار سے ہی ایک دلیل ﷲ تعالیٰ پیش فرما رہا ہے کہ وہ مال کی بے جا محبت کا شکار ہے۔ انسان کو اپنے گھوڑوں کو دیکھنا چاہیے کہ وہ جان کی بازی لگاکر جو کچھ حاصل کرتے ہیں وہ سب مالک کا ہوجاتا ہے۔ اپنے لیے وہ کسی چیز کا مطالبہ نہیں کرتے۔ مالک جو کچھ اُن کے آگے ڈال دیتا ہے اس پر قناعت کرلیتے ہیں۔ لیکن انسان کا حال یہ ہے کہ جو مال بھی ﷲ کے فضل و کرم سے اسے حاصل ہوتا ہے اُس کو صرف اپنا سمجھ کر اپنی خواہشات پر عمل کرنا چاہتا ہے۔ اور مال کے متعلق  ﷲ تعالیٰ کے حقوق کو ادا کرنا درکنار، دوسرے انسانوں کے حقوق بھی کھا جاتا ہے۔
ان آیات سے غافل انسان کو ﷲ تعالیٰ متنبہ کررہا ہے کہ کیا وہ اُس دن کو بھول گیا ہے جب مردے قبروں سے زندہ کرکے اٹھا لیے جائیں گے اور دلوں میں چھپی ہوئی باتیں سب کھل کر سامنے آجائیں گی۔ حالاں کہ حضرت انسان جانتا ہے کہ ﷲ تعالیٰ تمام انسانوں کے احوال سے بہ خوبی واقف ہے۔ اس لیے عقل مندی کا تقاضا یہ ہے کہ انسان ﷲ تعالیٰ کی ناشکری سے باز آئے اور مال کی محبت میں ایسا مغلوب نہ ہوجائے کہ اچھے بُرے کی تمیز بھی نہ کرے۔
کیوں کہ قیامت کے دن ہر شخص سے سوال کیا جائے گا کہ مال کہاں سے کمایا ؟ یعنی وسائل حلال تھے یا حرام، نیز کہاں خرچ کیا ؟ یعنی ﷲ تعالیٰ اور بندوں کے حقوق ادا کیے یا نہیں۔ ﷲ تعالیٰ نے یہ اعلان کردیا کہ ہر انسان کی زندگی کے ہر ایک لمحے کو محفوظ کیا جارہا ہے۔ آج کے کمپیوٹر کے زمانے میں اس کو سمجھنا بہت آسان ہوگیا ہے کیوں کہ جب انسان کے تیار کردہ پروگراموں کے ذریعے لوگوں کی ساری نقل و حرکت محفوظ ہوجاتی ہیں تو پھر خالق کائنات کے نظام میں ایسا کیوں نہیں ہوسکتا

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More